Random Thoughts – 191

اسے بالوں میں اُترتی سفیدی کا چکر کہئیے یا ذہنی بلوغت کی منزلوں کا سفر، دیدہ وری کا آغاز مانیے یا خود آگاہی کا انجام، جب “گَل اِک نُقطے وِچ مُک”جائے تو شعر، کویتائیں اور نغمے کوئی اور ہی زبان بولتے ہیں، اور توجہ کے محدب عدسے کِسی اور ہی طرف مرکوز رہتے ہیں۔

سارے منظر، ساری باتیں ایک ہی حقیقت بولتی، سُناتی اور دِکھاتی ہیں۔

جب کہ اُس سے دوستی ہو جائے گی

عُمر گویا زندگی ہو جائے گی ……

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s